Posts Tagged ‘Pakistan’

Since ICJ’s decision about Yadav’s case dated 18 May 2017, so much is being written, said and presented on the media. Merits and demerits of this case and objections by opposition are being raised, tables in the TV studios and assembly are being thumped and, mostly, it is being portrayed that Pakistan is (again) going to lose at international forum.

Let us see how ICJ works and what options Pakistan has now.

ICJ’s Modus Operandi

Simply put, when a common citizen hears the word “court” with reference to the implementation of law, there are three main scenarios that appear in mind, viz.,

  • Defence and prosecution lawyers arguing in front of a learned judge, who is appointed based on the qualification and experience. Judge is not supposed to take sides or in other words act as a counsel of one party or other. He listens to the arguments from both sides and issues an impartial verdict, based on the law and constitution of the state.
  • It is understood that every citizen of the state has submitted to the compulsory jurisdiction of the court. A person cannot just leave the courtroom stating that he does not accept the jurisdiction of the magistrate or judge or the court itself.
  • The verdict is binding and whole state machinery stands behind it to enforce its implementation. The very concept of law is diluted if it is not implemented.

Insofar as International Court of Justice (ICJ) is concerned, none of the above stated three conditions is fulfilled.

Briefly, examining, the ICJ on above there bullet points, we see that;

  • The criteria for the judges to be appointed in the ICJ is not only experience, qualification etc. The judges are elected for a period of nine (09) year through voting in General Assembly and Security Council. In order to have their ‘man’ appointed at ICJ, states carry out extensive lobbying in the UN, taking it as a matter of prestige. The very idea of a judge being impartial, unprejudiced and detached, hence, comes under question. That is why an elected judge is considered an abhorrence in civilized jurisprudence.

As the term of a judge nears, he may seek re-election and again, states start lobbying for votes. It must be kept in mind that there is no free lunch nor a free ride.

  • Since states are universally considered sovereign, this leads to the idea of ICJ’s jurisdiction being voluntary and not compulsory. Every state or country makes a declaration to the court, specifying the matters on which it will accept the jurisdiction of the court. This further makes the role of ICJ limited.
  • Although ICJ may pass judgements and give decisions favoring one country or other, there is no such mechanism for ICJ to get its orders implemented. The only option is Security Council and that only if it is moved by any state against other (deemed defying the court orders). Here, again, comes the diplomacy, favoritism and power play. Powerful states lobby in order to get the veto vote in their favor.

From the above points, one can easily draw an inference about the ineffectiveness of the court. ICJ (formed under the charter of United Nations) acts as more of a diplomatic body than a court which only can hear the cases as presented by states and not individuals.

There is also a provision in the ICJ rules that if there is a dispute before the court concerning some state and it does not have his representative as a judge in the bench, it may appoint an ad hoc judge. The ad hoc judge sits with the permanent judges, enjoys same authorities, and perks as those of permanent judges. The basic reason to appoint an ad hoc judge is to have country’s representation in order to place his country’s point of view in front of other judges. In other words, the ad hoc (like permanent ones) judge assumes the duty of the advocate for the country. Which again goes against the very norms of a judicial system.

May be all-of-the-above points contradict the very idea of an impartial justice system, but at international level only this one is prevailing under the aegis of UNO until we do not find a better system.

As we establish a question mark on the credibility, impartiality and authority of the ICJ, let us briefly examine the laws under which ICJ operates. Since there is no international law, which is supreme and sovereign, i.e. acceptable to all of the countries, there exist multilateral and bilateral treaties, international laws and customs, which are supposed to be binding. In fact, when it suits any country bilateral treaties can be scrapped and considered mere piece of paper.

Pakistan’s Options

Let us now examine the case where India has moved ICJ regarding his national, Kalbhushan Yadav, captured by Pakistan and sentenced to death for spying, subversive and state sponsored terrorist activities.

So far, India has; argued on the basis of Optional Protocol to the Vienna Convention on Consular Relations, 1963 (VCCR), Article 36, disregarding the 2008 bilateral agreement and sough the needed relief from the ICJ albeit Pakistan challenged the jurisdiction of the court and simultaneously argued that case to be dismissed because there was no urgency.

To much of Pakistan’s dismay, the court ordered to ‘stay’ the execution till the hearing at ICJ reached its conclusion, scrapping Pakistan’s arguments and favoring India. The judgement implies that Pakistan has flouted the Vienna Convention Agreement.

The court’s observation can be summarized in simple terms that Pakistan argument that VCCR is not applicable to spies, terrorists etc. since in Vienna Convention Spy is not mentioned at all. Pakistan can also not argue on the double passports of the Kalbhushan Yadav, one of which contains the Muslim name since as the accused confessed in the statement that he was from India, his nationality is established that very moment and irrespective of the name on passport, he is entitled to consular access as per the VCCR. It also goes without saying that court has determined that it has jurisdiction in this case, under Article 36 and 1 of the VCCR. Pakistan can also not move UN to ratify the 2008 bilateral agreement, unilaterally.

Pakistan has requested the court for expedited hearing of the case. Considering, how ICJ works, its (non)impartiality, lobbying by the states, diplomatic relations and international pressure Pakistan may not succeed in getting a favorable judgement.

Pakistan would neither like to present all of the evidences against commander Yadav of his subversive activities in the court, nor seem to grant consular access to the “self-confessed spy and terrorist”. It therefore can be forestalled that Pakistan would raise objection on the very jurisdiction of the court, as it seems to be only option.

Once Pakistan admits the jurisdiction, it is highly unlikely that Pakistan would be able to refuse the court’s orders as India can then move Security Council and considering our current diplomatic debacles, we cannot rely on efficacy of china’s veto vote as well.

Everything is being said and written on the media about jurisdiction but very less on the Pakistan’s Declarations Recognizing the Jurisdiction of the Court as Compulsory dated 29 March 2017 in which Pakistan declared 9 such matters where ICJ’s jurisdiction doesn’t apply. Article ‘e’ specifically excludes the jurisdiction of ICJ where the subject is related it Pakistan’s national security. Pakistan may (must) contest this point in the future. I wonder as to why the article ‘e’ was not invoked in first hearing.

I am sure that Pakistan’s best diplomatic minds and authority on international relations and laws must be evaluating the options or would already have framed the Pakistan’s point of view in this regard, which may be opposite to my assertion. However, currently, to me it seems that if Pakistan goes on to accept the jurisdiction of the ICJ and tries to contest the case on its merit, it will be a lengthy, cumbersome and tiring process (from 1947 till 2017 ICJ has given judgement on 160 cases i.e., 2.28 cases per year) and Pakistan would definitely wouldn’t want that.

In my opinion, if Pakistan wants to take this case to a logical end as per its domestic laws, its focus must be on the jurisdiction of the court and invoking Article ‘e’ of the Declarations Recognizing the Jurisdiction of the Court as Compulsory dated 29 March 2017.

(Reference taken from ‘Roses in December’ by ‘MC Chagla’)

مجھے اس شام واپسی پر معلوم ہوا کہ ایمسٹرڈیم کے “منطقہ لال روشنی” میں اس کثیر منزلہ عمارت کی دہلیز پر بیٹھی ہوئی برگنڈی رنگ کے بالوں والی لڑکی اپنے بوائے فرینڈ کے کندھے پر سر رکھنا چاہ رہی تھی مگر کیوں نہیں رکھ پا رہی تھی اور اسکا بوائے فرینڈ نہر کے پار، چرچ کے بلند ایستادہ مینار سے اوپر دور خلا میں کیا گھورے جا رہا تھا۔
میں آتے ہوئے یہ سوچ رہا تھا کہ یہاں ترک بچہ جو فرینچ فرائز کی دکان کھولے بیٹھا ہے کیسے اپنے پیسے پورے کرتا ہوگا اور کون اس کی دکان سے شراب و شباب اور بھنگ کے درمیان، اس سے تلے ہوئے آلو خریدتا ہو گا لیکن اب واپسی پر میں اس کی عقل اور کاروباری دماغ کی داد دے رہا تھا کہ آلو کے نمکین قتلے بیچنے کی اس سے بہتر جگہ تو کوئی ہو ہی نہیں سکتی تھی!
مجھے اب یہ احساس ہو رہا تھا کہ ڈی والن کے بیچوں بیچ گزرنے والی نہر میں بجروں پر بیٹھے ہوئے وہ بظاہر سست ا لوجود سیاح،  پانی کے شور،  غروب ہوتے سورج کی مدھم کرنوں، بطخوں کی قطاروں اور خنک ہوا کا لطف اٹھا رہے تھے، جن کا وہاں فارغ بیٹھنا مجھے پہلے مجھے وقت کا ضیاع لگ رہا تھا۔ وہ ابھی نیم اندھیر کافی شاپس میں لاوڈ میوزک میں سارا دن گزار کر نکلے تھے اور اب یہ دیکھ رہے تھے کہ سورج کس تیزی سے اس چرچ کے بڑے سے مینار کی اوٹ میں غروب ہو رہا تھا جس میں سے ہر گھنٹے بعد گھنٹیاں بجنے لگتی تھیں۔ کوئی کنفیشن کرے یا نہ کرے، کوئی عبادت کرنے آئے یا نا آئے، صلائے عام ضرور تھی۔ پرندے قطاروں میں واپس جا رہے تھے، سیاحوں کا رش کم ہو رہا تھا-  سارا دن سیاحوں کو دعوت گناہ اور جسموں کی فروخت کے بعد جدید دور کی غلام مخلوق لال روشنی والے کمروں کے شیشوں کے آگے پردے گرا کر کل دوبارہ آنے کے لیئے جا چکی تھی اور سایکلوں کی گھنٹیاں، کاروں کے ہارن، ٹرام کی آواز، پیدل سڑک پار کرنے والوں کے لیئے بزر، بطخوں کا شور اور دور کسی شراب خانے کے ٹی وی سے آتی ہوئی چیمینز لیگ کی کمنٹری کی ہلکی آواز ایک اس قسم کا شور ثابت ہو رہی تھی کہ جس میں انسان اپنی سوچوں اور خیالات کو پڑھنے سے قاصر ہو جاتا ہے۔
ایمسٹرڈیم کی وہ سڑکیں اور گلیاں تھیں جو دو گھنٹے پہلے تک انجان سی لگ رہی تھیں اب گوالمنڈی جیسی لگ رہی تھیں۔ مجھے وہ سینٹرل اسٹیشن جو پہلی نظر میں کوئی بہت ہی پر شکوہ عمارت لگ رہی تھی اب راولپنڈی اور لاہور کے ریلوے سٹیشن کی دوسرے درجے کی کاپی لگ رہی تھی۔ وہاں پر برہنہ مجسمے اور لاہور کے ریلوے سٹیشن پر پاک کلمات! ادھر مرسیڈیز ٹیکسیاں اور یہاں کالی پیلی مہران، آس پاس گزرتے لوگوں میں جاکھم والز بشیر اور ایلیسے شبانہ۔ بشیر چوہدری صاحب کا قرض دار اور جاکھم کریڈٹ کارڈ کا۔ ایلیسے کی خفیہ طورپر ڈی والن کے کسی دلال سے ڈیل اور پاکپتن کی شبانہ بھی جوہر ٹاون لاہور کے گیسٹ ہاوس میں کسی ایسے ہی مقصد کے لیئے رہے! وہاں کے میوزیم آف سیکس، میوزیم آف پراسٹیٹوشن، میوزیم آف ٹارچر اور مادام تساو میوزیم میں اگر غلاموں، جنگ و جدل اور جاہلیت کے دور کی انسانیت کی تذلیل کی ایک تاریک تاریخ قید تو یہاں پر شیش محل، شاہی قلعے، اور بارہ دریوں میں بھی انسانیت کی چیخیں مقید جہاں پر غلاموں اور لونڈیوں کی حالت زار کے ساتھ ساتھ بیٹوں کے ہاتھوں باپ کو زندان میں ڈالنے کی کہانیاں قید۔ یہاں پر “ایکپیٹس” بہتر مستقبل کی تلاش میں غم جاناں سے بیزار، غم روزگار کا روگ لیئے پھریں اور میرے “ٹرانسپورٹر فلم کے ہم شکل و ہم لباس  ڈرائیور جیسے ولندیزی جوان باہر جانے کے   تگو دو میں۔

ہالینڈ میں الیکشن کا دن تھا اور سیاسی پنڈتوں کو یہ امید تھی کہ گریٹ ویلڈرز جیت جائے گا۔ میرے ٹرانسپورٹر فلم کے ہم شکل و ہم لباس  ڈرائیور کا بھی یہی خیال تھا جو ابھی ووٹ ڈال کر آیا تھا اور  اب کام پر تھا۔ اس چناو کے دن بھی وہاں پر کوئی چھٹی نہیں،کوئی بینر نہیں، کوئی ریلی نہیں کوئی پلے کارڈ نہیں کوئی حب الوطنی کا سرٹیفیکیٹ نہیں کوئی غداری کی مہر نہیں کوئی پولنگ سٹیشن پہ لائین نہیں، کوئی موبائیل سروس بند اور نہ ہی کوئی سکول! ٹرام ویسے ہی چل رہی تھی سیاح اسی طرح بیئر اور  بھنگ میریجوانا والے سگریٹ پی رہے تھے۔ یہ بھی بھلا کوئی الیکشن ہوا؟ میرا ٹرانسپورٹر فلم کے ہم شکل و ہم لباس  ڈرائیور کا یہ رونا کے ہماری جابز ایکسپیٹس لے گئے اور ہم بے روزگار بالکل اسی گرایجویٹ “ٹویٹراتی” کی طرح تھا جو پاکستان کے ہر مسئلے کی جڑ میں افغانی تلاش کریں۔

مماثلتیں اپنی جگہ تو اندیشہ ہائے دور دراز کہ ائے پاکستانیو! تم 11 اگست کی تقریر میں پاکستان کے آیئن کے خدوخال  کو تو سیکولر بناتے ہو، پھر بھارتی قرارداد مقاصد کو لے کے اس میں مزہب کا تڑکا لگاتے ہو۔ کبھی بناتے ہو جناح کو لبرل تو کبھی اسکے نام کے ساتھ “رح” سجا دیتے ہو۔ ایک احمدی سے اس قرارداد کا دفاع کرواتے ہو، بعد میں اس کی پوری قوم کا بھی مقاطعہ کرا دیتے ہو۔ شری چندرا چڈوپادے اور جوگندر ناتھ منڈل کو دیس نکالا دیتے ہو، پھر آپریشن سرچ لائٹ بھی اٹھا دیتے ہو! مزہب کے نام ملک بنایا تھا اس کو پھر قومیت کے نام پر دولخت کرا دیتے ہو! ایک سیکولر اور جمہوری طرز حکومت کا آیئن بناتے ہو پھر اس میں مزہبی شقوں کا تڑکا بھی لگا دیتے ہو۔ اقلیتوں پر کبھی زمین تنگ کرتے ہو تو انکو وزارتوں سے بھی ہمیشہ نواز دیتے ہو۔ لگا بیٹھتے ہو جو امریکہ سے جوت۔ افغانستان کی سنگلاخ چٹانوں میں اپنے خون سے اس کا سرمایہ دارانہ نظام بچا لیتے ہو۔ کسی کی لگائی گئی آگ کو بجھاتے بجھاتے اپنے اپ کو ہی جلا لیتے ہو۔ سٹاک ہوم سنڈروم میں ایسے مبتلا ہوتے ہو کہ یہاں آگ لگانے والوں کو بار بار اپنا بھائی بنا لیتے ہو۔ کشمیر کے نام پر چار جنگیں بھی لڑتے ہو، بھارت کے ساتھ ساتھ باقی ہمسایوں کو بھی دشمن بنا لیتے ہو۔ پھر ایمبیسی کے سکولوں میں اشوک لی لینڈ اور ٹاٹا بسوں پر آنے والے بچوں کو انہی دشمن ملکوں کی فہرست بھی پڑھاتے ہو۔ حرام مشروبوں پہ پابندی لگا دیتے ہو لیکن مری بروری کا منافع بھی ہر سال بڑھاتے ہو! اپنے ملک میں تفرقہ بازی عروج پر لیکن اسلامی سربراہی کانفرنس منعقد کروا دیتے ہو۔ جو کہتے تھے کہ پاکستان پانچ سال نہین نکال سکتا ان کے سامنے گرتے پڑتے کھڑے رہتے ہو! پاکستان، تم ایک گورکھ دھندہ ہو!  پہلے امریکہ اور اب چین، پہلے جہاد اور اب ضرب عضب، پہلے مارشل لاء اب ڈان لیکس، پہلے جعلی کلیم اور اب پانامے، پہلے سعادت حسن منٹو، اب عطالحق قاسمی، پہلے فوجی ڈکٹیٹر اب جمہوری آمریت، پہلے امریکہ کے لیئے جنگیں، اب چین کے لیئے سڑکیں، پہلے دوسرے ملکوں کی ایرلاینز کو بنانے کے لیئے حدمات اب دوسرے ملکوں سے بسیں تک خریدنے کے لیئے قرضے، پہلے سپارکو، اب پانی سے چلنے والی گاڑی، پہلے چین کو دنیا میں متعارف کروایا، اب وہی چین سلامتی کاونسل میں ہمیں دہشت گرد ریاست قرار دلوانے سے بچائے! پہلے بھی کچھ ٹوٹی پھوٹی خود مختاری اب خودمختاری کی تہمت!

انہی منضاد مماثلتوں میں نیند آگئی اور صبح اٹھ کر یہ احساس شدت سے ہو رہا تھا کہ شائد بل ڈاگ کافی شاپ کے اس ہندوستانی نژاد اٹینڈینٹ نے مجھے بھنگ پلا دی تھی!

ڈسلڈورف سے ایمسٹرڈیم آئیس ریل پر 260 کلومیٹر فی گھنٹا کے سفر کے دوران کوئی بلانڈ توبہ شکن بیر کے گھونٹ بھرنے کے بعد اپنے بوائے فرینڈ کے ساتھ بوس و کنار میں مصروف نظر آتی ہے اور کسی کے کان پر جوں نہیں رینگتی۔ بالکل اسی طرح جیسے ماہرہ خان لکس کے اشتہار میں جب فواد خان کی بانہوں میں، ایک ادا کے ساتھ  آنکھ دبا کر بولتی ہے “بس ذرا سا لکس” تو سارے گھر کے افراد اس کو ساتھ بیٹھ کر دیکھتے ہیں اور سنی ان سنی اور دیکھا ان دیکھا کر دیتے ہیں کہ ماہرہ خان بنیادی طور پر کیا پیغام دے رہی ہے؟ تاحد نگاہ پھیلے ہوئے گندم اور مکئی کے کھیتوں پر حرام خنزیر کا گوشت کھانے والے اور انکی فارمنگ کرنے والے جرمن کسان ہوائی جہاز سے کھاد اور کیڑے ماز ادویات کا چھڑکاو کرتے ہوئے نظر آتے ہیں جو  اب فصل کو کھاد لگانے  کے  بعد اپنے چھوٹے سے قصبے کے پب میں بیٹھ کرشراب کی چسکیاں لے کر اپنی سارے دن کی تھکاوٹ اتاریں گے،  اور ویک اینڈ پر اپنی موٹر بوٹ لے کر کسی جھیل میں مچھلیوں کا شکار کریں گے اور مچھلی پکڑنے کے بعد اس کو دوبارہ پانی میں پھینک کر واپس آجایئں گے – ڈسلڈورف سے 7771 کلومیٹر دور جھنگ کا کسان سارا دن دھوپ میں فصلوں پر قرض پر لی گئی کیڑے مار دوا کا سپرے کرنے کے آئے گا اور اپنے نفع نقصان کا حساب کتاب کرنے کے بعد جب یہ اندازہ لگائے گا کہ اس دفعہ بھی چوہدری شوگر مل نے پیسے وقت پر ادا نہیں کرنے تو  اس کی بلا جانے کہ بانو قدسیہ کی راجہ گدھ میں حرام اور حلال کا کیا فلسفہ بیان کیا گیا ہے، یہ گدھ کیا ہوتا ہے اور بانو آپا نے اسے اتنی نفرت انگیز چیز کیوں بنا کے رکھ دیا ہے۔۔ ایسا کیوں ہے کہ جیسے جیسے گدھ کی تعداد میں کمی آ رہی ہے چوہے اور کتے اتنی ہی رفتار سے بڑھ رہے ہیں اور یہ حرام کھانے اور پینے والا ڈاکٹر لنڈسے اوکس کون ہے جو ڈکلوفیناک نامی دوا پر پابندی کا مطالبہ کر رہا ہپے کہ وہ گدھ جو 1980 تک صرف ہندوپاک میں 30 ملین تھے اور اب ہزاروں میں رہ گیے ہیں انکی افزایش کی جاسکے  اور 7771 کلومیٹر دور وہ شراب پینے والا کسان خوشحال کیوں ہے اور وہ جس نے آج تک حرام کا ایک لقمہ نہیں چکھا اس معاشی حالت بہتر کیوں نہیں؟ لیکن اسکو یہ پتہ ہے کہ گدھ حرام پر پلتا ہے اور وہ انسان بھی جو غلط کام کرتا ہے وہ گدھ بلکہ راجہ گدھ ہے اور وہ راجہ گدھ اپنے ساتھ ساتھ اپنی نسلیں بھی ڈبو کر رکھ دیتا ہے اور اسکی نسلیں معذور اور اخلاق باحتہ پیدا ہوتی ہیں! گدھ مردہ باد! خیر، جب ریل کسی اسٹیشن پہ رکتی ہے تو دو باوردی ملازمین ایک برقی پلیٹ فارم لا کر ڈبے کے سامنے رکھ دیتے ہیں اور باقی مسافرین فطار بنا کر اس کے پیچھے کھڑے ہو جاتے ہیں۔ ابھی آپ ورطہء حیرت میں مبتلا ہوتے ہیں کیا ماجرا ہے تو ایک وہیل چیئر پر بیٹھا شخص نمودار ہوتا ہے، جس کو وہ برقی پلیٹ فارپ سلیقے اٹھا کر بوگی کے اندر پہنچا دیتا ہے اور وہ دروازے کے قریب خصوصی افراد کے لیئے مختص سیٹ پر آرام سے براجمان ہوجاتا ہے۔ لوگ اپنی اپنی نشتوں پر بیٹھ جاتے ہیں اور ریل چل پڑتی ہے۔ ایک معذور شخص کو اتنی عزت ملتے دیکھ کر آپ حیرت میں گم ہوتے ہیں کہ یہاں پر آئے روز خصوصی افراد کو اپنے حقوق کے لیئے مال روڈ کیوں بلاک کرنا پڑتی ہے؟ گدھ مردہ باد! ریل کب جرمنی سے ہالینڈ میں داخل ہوتی ہے کچھ پتہ نہیں چلتا۔ نا تو کو ئی امیگریشن کی لائن اور نا ہی کوئی خاردار تاریں یہاں اپنی ٹانگیں اٹھا اٹھا کر زمین پر مارنے اور غیر ملکی فوجیوں کو آنکھیں دکھانے کا ڈرامہ اور امیگریشن کی لمبی لمبی لایئنیں! گدھ مردہ باد! ہوائی چکیاں دکھائی دیتی ہیں جن سے اندازہ ہوتا کہ آپ ہالینڈ میں آگیے ہیں! وہی ہالینڈ جہاں  چرس تقریبا اسی طرح لیگل ہے جیسے شاہ جمال پر۔ لیکن شاہ جمال پر ڈھول کی تھاپ پر چرس صوفی نشہ بن جاتا ہے۔ گدھ مردہ باد! ایمسٹرڈیم میں اسی طرح کی ایک نہر ہے جیسے لاہور میں۔۔ ایمسٹرڈیم میں اسی طرح کا ریڈ لایٹ ایریا ہے جیسے لاہور کی ہیرا منڈی۔ فرق صرف یہ ہے کہ ادھر کی نہیر میں ہر وقت پانی بہتا ہے اور ٹورسٹ اس میں کشتی رانی کرتے ہیں، بیئر پیتے ہیں اور لاہور کی نہر میں کتے، گدھے، انسان اور بھینسیں ایک ساتھ نہاتے اور رفع حاجت کرتے ہیں اور بچے بڑے سڑک کے کنارے موجود بیلنے والے سے خرید کر گدلے گلاسوں میں گنے کا جوس پیتے ہیں۔ گدھ مردہ باد!  وہاں کے ریڈ لایئٹ ایریا میں کام کرنے والی طوایفوں کو قانونی تحفظ حاصل ہوتا ہے اور یہاں کی طوایفوں کو غیر قانونی۔ گدھ مردہ باد! وہاں بھی جمہوریت ہے اور یہاں بھی۔ وہاں کی جمہوریت بھی سرمایہ دار کی مرہون منت ہے یہاں بھی – وہاں کی جمہوریت پل بڑھ کے اور جوان ہو کے اب اپنی ٹانگیں قبر میں لٹکائے بیٹھی ہے اور یہاں کی جمہوریت ابھی پالنے سے باہر آنے کا نام نہیں لے رہی۔ گدھ مردہ باد! ۔ بریگزٹ، گریٹ ولڈرز، میرین لی پین، ٹرمپ، اردگان، مودی اسی “سرمائے سے خوف” کی علامت بن گیے جس نے پہلے سرحدوں کو ختم کیا اور اب قومی ریاستوں کے وجود کے درپے ہے اور تاریخ کی دوسری طرف بھاگنے کی کوشش میں ہیں۔  وہاں پر ایپل، گوگل، اوبر، سٹاربکس تارکین وطن کی حمایت میں ساراپا احتجاج کہ ان کے بغیر ملٹی نیشنل کمپنیوں کا وجود خطرے میں۔ وہی کمپنیاں جن کی وجہ سے جمہوریت کو دوم ملا! اسی سرمایہ دارانہ نظام نے اس قابل کیا کہ آج ووویجر۔1 6 بلین کلومیٹر دور سے مدہم نیلے نقطے کی تصویر بھیج چکا ہے اب اگر وہی گدھ  جمہوریت اپنی وجہ پیدایش یعنی  گدھ سودی نظام اور سودی سرمائے کے مقابلے میں “ٹرمپ” وغیرہ کی شکل میں آئے گی تو جیت کس گدھ کی ہونی ہے  یہ جاننے کے لیئے گدھ میڈیا دیکھنا اور پڑھنا ضروری نہیں ہے۔ یہاں تو یہ بھی معلوم نہیں ہے کس گدھ کا ساتھ دیا جائے؟ کس کے لیے یہ نعرہ لاگایا جائے کہ گدھ مردہ باد۔ کل کو گدھ سرمایہ داری اور گدھ جمہوریت کو بچانے کے لیئے گدھ سوشلزم مردہ باد کا نعرہ لگایا تھا آج کیا کریں؟ یہاں پر سرحدیں محفوظ کرنے کے لیئے جوہری میزایئل اور باڑیں اور یہ نعرہ کہ دشمن گدھ مردہ باد ۔ وہاں اگر مہاجرین کو دیس نکالا دیں ہم بھی تین تین دہایوں سے مقیم افغانوں پر زمین تنگ کریں، کہ اپنے حوف اور فکر معاش میں گھر بار چھوڑ کر آنے والے گدھ مردہ باد!! اور جب تک ادھر یہ سمجھ آنی ہے کہ جمہوریت گدھ ہے یا کوئی اور نظام! وہ نظام جس کو بچاتے بچاتے پاک سر زمین پچھلی تین دہایئوں سے لہو لہو ہے یا وہ نظام جس نے جمہوریت کو جنم دیا تب تک قومی ریاستیں اورسرحدیں قصہ پارینہ بن چکی ہوں گی، سرحدوں پردشمن فوجیوں کو آنکھیں دکھانے والے فوجی واپس بیرک میں آ گئے ہوں گے اور رانی توپوں میں زنگ لگنے کے بعد شائد کیڑے بھی پڑ چکے ہوں اور ماہرہ خان والے اشتہار کا “بس ذرا سا لکس” اپنی حکومت بنا چکا ہوگا، جمہوریت مارشل لاء کی طرح گالی بن گئی ہوگی-نجانے کونسا گدھ مردہ باد۔  جب تک ‘لکس’ کی حکومت نہیں آتی ڈسلدورف سے ایمسٹرڈیم کا سفر کرتے ہوئے بلانڈ توبہ شکن اسی طرح بیئر پیتی رہے گی اورکوئی مسافر اس کو دیکھنے کے بعد دیکھا ان دیکھا کر دے کا اور زیر لب بڑبڑائے گا  گدھ مردہ باد!

Now a days, people from all school of thoughts are discussing the issue of Afghan Immigrants being asked to leave Pakistan by 31st December 2016. Some people argue that it shall be benign to keep Afghans here in the country and others see Afghans as a security threat. But by doing so, they tend to see the picture in either black or white.

The group who favors keeping them in Pakistan, totally forget the issues associated with keeping them here in the country which involve security mainly and then social issues like narcotics, smuggling, robberies and kidnapping for ransom etc. While advocating for keeping them here in the country they usually rely on expounding lower level benefits they bring about. For example an afghan working in fields of a small scale farmer. Other than that they give examples for history as to how ancient tribal people used to open the doors for immigrants.

On the other hand, the group who opposes the extended residency of Afghans here in the country don’t usually seems concerned about finding a way to harness the expertise of skilled, unskilled and (or) semi-skilled labor for boosting country’s economy and generating new opportunities in order to exploit the opportunity of availability of cheap labor.

We are living in the twenty first century which is governed by free trade agreements. All developing countries are doing is to create such a business friendly environment as governed by universal labor laws in order to attract multinational companies to set up their business there so that more jobs are created and manpower is utilized for the betterment. In a broader canvas, the developed countries like Australia, Canada and USA, import skilled or semi-skilled manpower from other countries which in return serve their economy. One country’s brain drain becomes brain of other country.

Taking about Pakistan, there is no official policy to curb brain drain or increase brain gain. One can just go through the official website of Directorate General of Immigration and Passports to know that Pakistan is still living in past century where one is Pakistani either by birth or by migration of by descent. The language used on this website page is also vague and doesn’t provide any information about migrants (like Afghan Migrants) and those kids who are born to a migrant in Pakistan as to how can they apply for Pakistani citizenship. However, under Citizen By Birth clause the official website doesn’t forget to specify that children of enemy born in Pakistan are not considered citizens without paying heed to defining as to who is enemy. Do we consider Afghan as an enemy state or friendly state? The word enemy is specific to only one country? If officially we talk about enemies it begs the same question about friendly state(s) and what is the fate of children of friendly aliens born in Pakistan? All of the verbose in those website is so confusing.

In all of the developed or developing world there are some rules and regulations set regarding immigration. Countries like Canada and Australia rely on the efficacy of points based system in which a person has to prove him/herself fit for job, security clearance and qualification etc and after residing in such countries for up to five years one can get the citizenship. These countries also give opportunity to provinces to carry out provincial nominees and other such programs so that if a province feels that there is shortage of manpower, it can seek from outer world. In Pakistan we can see that a child of Afghan descent born in Pakistan cannot apply for Pakistani citizenship.

If a migrant is having business here in Pakistan or doing a job, he/she must be entertained with respect and given full opportunity to prove themselves and after a prescribed time frame given Pakistan citizenship with due process which includes security clearance, education background and (or) worth of business etc. In this way they will come in the mainstream and Pakistan will commence brain gain.

It is high time that we open our doors and follow the norms as in place in other countries which must include but not limited to:

  1. Right to apply for citizenship of Afghans or other migrants, subject to such security clearance or skills or qualification as deemed necessary by the state.
  2. Right given to provinces to nominate immigrant applications.
  3. A change in federal immigration policy with a view of brain gain and lucrative opportunities for foreign resident Pakistanis
  4. Repealing of rule to not grant immigration to a person married to Pakistani woman

Just giving deadlines to leave the country to those who were born here and have been living in the country for almost three decades now is not only inhumane but also doesn’t conform to the international laws and regulations governing migrants. State always has the right to deport or cancel the passports of those who are considered security threat.

 

پچھلے دنوں حامد میر صاحب کا کالم بھٹو اور بلاول کی سمجھداری سے متعلق پڑھا جس میں قابل احترام کالم نگار نے اپنا مقدمہ  کہ “بلاول زیادہ سمجھدار ہیں یا بھٹو”، بلاول کی اس حالیہ تقریر پر رکھا جس میں انہوں نے یہ سوال کیا تھا کہ ‘پاکستان کا صدر صرف ایک مسلمان شخص ہی کیوں ہو سکتا ہے’ اور اس کے رد میں یہ دلیل دی کہ چونکہ انیس سو تہتر کے آئین میں صدر کے لئیے مسلمان ہونے کی شرط رکھی گئی ہے اس لئیے اس میں تبدیلی نہیں ہو سکتی۔

دوسرا انہوں نے کچھ ممالک کی مثال دی جس میں صدر اور وزیراعظم کے کے لئے کیسے خاص مذہب سے وابستگی ضروری رکھی گئی ہے۔ یاد رہے کہ یہ معلومات  پیو ریسرچ کی ویب سائٹ پر بھی موجود ہیں۔   اس طرح کی امثال کے بعد انہوں اپنا رخ اپنے خاص اسلوب کی طرف کر لیا اور جس طرح کے ان کے مستقل قاری جانتے ہیں کہ وہ اپنے ہر دوسرے کالم میں کسی نامعلوم سفارتکار یا سیاستدان سے اپنا مکالمہ بیان کرتے ہیں (انکو شائد معلوم ہے کہ کوئی اس مکالمے کا ثبوت نہیں مانگے گا) اور اس مکالمے کے مندرجات سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ نامعلوم سیاستدان یا سفارتکار حامد میر کے خیالات سے یا تو متفق ہوتا ہے یا وہ میر صاحب کے خیالات سے اتفاق رکھتا ہوتا ہے یا  آخر میں حامد صاحب اسکو قائل کر لیتے ہیں۔

اس مکالمے میں میں  بھی پیپلز پارٹی کے اراکین اسمبلی اور سینٹر صاحب بلاول پر پھبتی کستے رہے اور کف افسوس ملتے رہے کہ وہ اپنے والد کے بنائے ہوئے آئین سے غداری کے مرتکب ہو رہے ہیں اور یہ کہ پیپلز پارٹی کا ووٹر جو آج بھی بھٹو کے نام پر ووٹ دیتا ہے ان سے یہ پوچھ رہا ہے کہ بھٹو زیادہ سمجھدار یا بلاول اور مسلسل حامد میر کی ہاں میں ہاں ملاتے رہے۔

یہاں  پر کچھ سوالات جنم لیتے ہیں۔

ایک تو یہ کہ کیا حامد میر صاحب نے یہ فرض کر لیا ہے کہ 1973 میں آیئن منظور ہو جانے کے موقع پر پاکستان کے عوم کا اجتماعی شعور اپنے اوج کمال پر تھا اور اس کے بعد اس آیئن میں کسی قسم کا بدل نہیں ہو سکتا؟ جب جدید دور کی ہر ریاست اپنا ایک آیئن بناتی ہے جس میں ملک کے شہریوں کے حقوق اور ریاست کے جملہ فراٰیض متعین کر دیے جاتے ہیں۔ لیکن ایسا کرنے کے بعد مقننہ کو تالا نہیں لگا دیا جاتا بلکہ ریاست اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ مقننہ کے اجلاس لازمی ہوں’ جمہوری عمل کے لیئے چناؤ بھی ضرور ہو تو ایسے میں ریاست اس بات کا اعادہ کر رہی ہوتی ہے کہ آج منظور شدہ آیئن میں بہتری کی گنجایش موجود ہے اور اس میں حالات کے مطابق تبدیلی کی جا سکتی ہے۔ ایسے میں اگر کوئی آیئن کی کسی شق میں تبدیلی کی بات کرے تو اس کو نا سمجھ ہونے کا طعنہ دینا دانش مندی نہیں ہے۔ میر صاحب کی نظر میں سمجھداری کی تعریف کیا ہے؟ اگر انکی نظر میں سمجھداری کسی ایک نظریے پر جامد ہو جانے کا نام ہے تو میں نہایت ادب کے ساتھ اس سے اختلاف کروں گا۔ نظریہ کسی قوم کے اجتماعی شعور کے تابع ہوتا نہ کہ اجتماعی شعور کسی نظریے کے۔ اور تاریخ شاہد ہے کہ اقوام کا اجتماعی شعور کبھی بھی جامد نہیں ہوتا اور نہ اس کو ہونا چاہیے ورنہ ایسی اقوام کا وہی حال ہوتا ہے جو آج پاکستان کا ہو رہا ہے۔ یہی جامد نظریہ آج ہمارا آدھا ملک کھا چکا ہے اور باقی کا ملک ایک طرح سے نظریاتی کونسلوں اور ان کے دفاع کے لیئے موجود ڈندہ بردار ہجوم کے ہاتھ میں آ چکا ہے۔ کیا وجہ ہے کہ آج ستر سال ہونے کو آئے ہیں پاکستان کو بنے ہوئے، ہم نے قرارداد مقاصد منظور کر لی؛ ہم نے آیئن میں ملک کا نام مذہنی کر دیا، ریاست نے ایک گروہ کو غیر مسلم قرار دے دیا، آیئن میں اسلامی شقیں ڈال دیں، پھر بھی ہمیں کوئی ایسا خوف دامن گیر جو ہمیں ہر وقت ستاتا ریتا ہے اور راتوں کی نیندیں حرام کیئے رکھتا ہے۔ یہ خوف کبھی ہم سے نظام مصطفیٰ کی تحریک چلواتا ہے تو کبھی افغان جہاد میں ہم سے ایک سیکولر اور سرمایہ دار ملک امریکہ کے پیسوں سے جہاد کرواتا ہے؟ ہمارا یہ خوف کبھی ہم سے عیسایئوں کی بستیاں جلواتا ہے اور کبھی ڈی چوک پر دھرنا دلواتا ہے؟

دوسرا سوال یہ ہے کہ کیا حامد صاحب اس بات کو اچھا سمجھتے ہیں کہ وہ ووٹر جو آج تیس چالیس سال بعد بھی پیپلز پارٹی کو بھٹو کے نام پر ووٹ دیتا ہے، کیا  اس کو یہ حق پہنچتا ہے کہ وہ کسی دوسرے کی دانشمندی یا سمجھ بوجھ پر سوال اٹھایے؟ کیا اس ووٹر کی سوچ آج کے جدید صنعتی معاشرے کی عکاسی کرتی ہے؟ کیا ایسا شخص جو آج بھی 1970 میں رہ رہا ہے، اس سے یہ امید رکھی جا سکتی ہے کہ وہ آج کے دور کے جدید تقاضوں کو سمجھتا ہے؟ ایسا ووٹر جو آج صرف شخصیت پرستی کی وجہ سے کسی پارٹی کو ووٹ دیتا ہے کیا وہ کسی قسم کی نظریاتی کفتگو یا کسی نظریے پر اپنی رائے دینے کا حق رکھتا ہے ؟ جب کہ بلاول کا اٹھایا گیا نکتہ خالصتاَ نظریاتی نکتہ ہے جس کا جواب بھی دلیل کے ساتھ اور نظریاتی بنیادیوں پر دینا چایئے بجائے اس کے کہ اس نظریے کو صرف اس بنیاد پر رد کر دیا جائے کہ وہ ووٹر جو بھٹو کے نام پر پیپلز پارٹی کو ووٹ دیتا ہے وہ ناراض ہو جائے گا۔ حامد میر صاحب آپ اس سے بہت بہتر ہیں، دلیل کہاں ہے؟ کیا ہی اچھا ہوتا کہ میر صاحب ان اراکین اسمبلی کو سمجھاتے کہ وہ لوگ لیڈران ہیں اور انکو عوام کو آگے بڑھ کر کمان کرنے کے لیے منتخب کیا جاتا ہے۔ انکا کام یہ نہیں ہے کہ وہ ہر پانچ سال بعد شخصیت پرستی کے نام پر ووٹ بٹور کر مقننہ میں آ جایئں۔ ان کو چاہیے کہ اپنے کام اور نظریاتی بنیادوں پر ووٹ لے کر آیئں- وہ کب تک عوام کے مذہنی اور سیاسی جذبات کے ساتھ کھلواڑ کرتے رہیں گے۔ بہرحال میر صاحب نے یہ کہنا تھا اور نہ کہا بلکہ ان معزز اراکین اسمبلی اور سینٹر صاحب کے اس ‘گلے’ کو ایک پراپیگنڈہ اور دلیل کی طرح استعمال کر کے آگے بڑھ گیئے۔

جہاں تک حامد صاحب کی اس دلیل کا تعلق ہے کہ کچھ دوسرے ممالک میں بھی سربراہ مملکت  کے لیئے کسی خاص مذہب سے تعلق ضروری اور پاکستان اس میں اکیلا نہیں ہے تو ان کی خدمت میں عرض ہے کہ ہر ملک کا ایک اپنا نظام اور اپنے معروضی حالات اور اپنی تاریخ ہوتی ہے جس کی بنیاد پر اقوام اپنے فیصلے کرتی ہیں۔ آج کسی غیر جمہوری معاشرے کے قوانین کو پاکستان کے اس معاشرے پر، جہاں جمہوریت کی ایک تاریخ ہے، مسلط نہیں کیا جا سکتا۔ پاکستان خالصتاَ ایک سیکولر جمہوری عمل کی پیداوار تھا، تو حامد میر صاحب غیر جمہوری معاشرے اور ایسے معاشرے جہاں پر جمہوریت ابھی نئی نئی آئی ہے، کی مثالیں دے کر کیا باور کروانا چاہ رہے ہیں جب کہ ایسے ممالک بھی اب سیکولر روایات کو اپناتے نظر آرہے ہیں؟ کیا حامد میر صاحب اس بات سے انکار کریں گے کہ پاکستان کے جملہ ادروں نے، سپریم کورٹ سے لیکر ہر ادارے میں غیر مسلم سربراہان دیکھے ہیں۔ دوسری اہم بات یہ ہے کہ پاکستان کے کچھ شہریوں کو درجہ دوم میں ڈال دینے سے اور پاکستان کو کی ریاست کو زیادہ سے زیادہ مذہبی بنانے سے عام آدمی کی صحت پر کیا اثر پڑا ہےاور کیا پاکستان کی عالمی سظح پر اہمیت بڑھ گیئی ہے؟ حالت یہ ہے کہ آج پاکستان اقوام متحدہ کا ایک الیکشن بھی ہار چکا ہے۔ کوئی یہ کہ سکتا ہے کہ اگر آیئن میں غیر مسلم صدر کی گنجائش ہوتی تو کونسا پاکستان کے عوام کا معیار زندگی بلند ہو جانا تھا یا پاکستان نے اقوام متحدہ کا انسانی حقوق کی کمیٹی کے سربراہ کے لیئے ہونے والا الیکشن جیت جانا تھا؟ سوال پھر بھی وہیں پر ہے جب اس سےعام آدمی پر کوئی اثر نہیں پڑتا تو پھر آیئن میں ایسی شقوں کا کیا فائدہ ہے؟

میر صاحب نے کھینچ تان کے برطانیہ کی ملکہ کے لیئے عیسائی ہونا ثابت کیا ہے۔ میر صاحب کی خدمت میں عرض ہے کہ برطانیہ میں ملکہ یا بادشاہ کا عہدہ صرف نمایشی ہے اور کیا آپ سمجھتے ہیں کہ ایک غیر عیسائی منتخب وزیر اعظم جب ملکہ کے پاس اپنے وزارت کے کاغذات کے ساتھ حاضر ہو گا تو ملکہ اسکو اس بنیاد پر مسترد کر دے گی کہ وہ عیسانی نہیں ہے؟ کیا ملکہ کے پاس یہ اختیار ہے؟ ہمارے آیئن میں تو ایسا لکھ دیا گیا ہے اور اکثریت کے مذہب سے تعلق نہ رکھنے والوں کو دوسرے درجے کا شہری تسلیم کیا گیا ہے۔  کیا آپ یہ ثابت کر سکتے ہیں؟ آج لندن کی میر شپ کے لیئے ایک اہم امیدوار مسلمان ہے تو کیا برطانیہ کا صدیوں پر محیط عیسایئت پر مبنی نظریہ خطرے میں ہے یا ملکہ نے صادق صاحب کے الیکشن لڑنے پر پاندی لگا دی ہے؟

بات ہو جمہوریت اور سیکولر اقدار کی اور بھارت کی مثال دیے بغیر بن جائے، یہ کیسے ہوسکتا ہے، جبکہ قلم پاکستانی کالم نگاروں کے ہاتھ میں ہو۔ میر صاحب نے بھی ہندوستان کی مثال دی ہے  اور یہ باور کروانے کو کوشش کی ہے کہ چونکہ پاکستان میں اقلیتوں کے لیئے مخصوص نششتیں ہیں، آیئن میں انکے حقوق کی ضمانت دی گیئ ہے اور انکو بھارت کی طرح عام انتخابات میں الیکشن نہیں لڑنا پڑتے اس لیئے پاکستان بھارت سے بہتر ہے۔ اور ساتھ میں یہ بھی فرما دیا کہ پاکستان میں اقلیتیں ہندوستان کے مقابلے میں کم ہیں۔ معافی کے ساتھ میں یہ کہنے جسارت کروں گا کہ یہ دونوں دلائل انتہائی بودے ہیں۔ میر صاحب! حقوق کوئی خیرات نہیں ہوتے کہ انکو بانٹا جایے۔ ایک ریاست میں رہنے والے سب لوگوں کے حقوق برابر ہوتے ہیں۔ اصل جھگڑا ہی یہی ہے کہ جب ہم یہ کہتے ہیں کہ آیئن میں اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ کیا گیا ہے  تو ہم ایک گروہ کو برتر اور دوسرے کو کم تر سمجھ رہے ہوتے ہیں اور یہ کہ برتر گروہ اپنے سے کمتر گروہ کو حقوق دان کر رہا ہے۔ جب ایک ریاست وجوود میں آگئی تو اس ریاست کے سب شیریوں کے حقوق برابر ہو گیئے۔ اس میں آیئن کو کسی خاص مذہب، رنگ یا نسل سے تعلق رکھنے والوں کو حقوق کی ضمانت دینے کی ضرورت پیش نہیں آتی۔ اب بھارت میں اگر انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں ہو رہی ہیں تو پاکستان کا بھی انسانی حقوق کے حوالے سے ٹریک ریکارڈ کچھ اچھا نہیں ہے پھر بھی کیا وجہ ہے کہ بھارتی مسلمان سیکولرازم کے دفاع کے لیئے اپنے خون کا آخری قطرہ تک بہانے پر آمادہ نظر آتے ہیں؟ یاد رہے کہ جئے ہند کا نعرہ لگانے پر مجبور کرنا سیکولرازم نہیں مودی ازم کا شاخسانہ ہے۔ ویسے بھی “تجھے پرائی کیا پڑی اپنی نبیڑ تو”!!! پاکستان کی غیر مسلموں کو وزارتیں دینے کی روایت اگر پرانی ہے تو ایسے وزراء کی پاکستان چھوڑ کر جانے کی روائت بھی اتنی ہی پرانی ہے۔

1973 کے آیئن میں اگر کوئی ایسی بات لکھ دی گئی ہے جو جدید نظریات سے میل نہیں کھاتی تو خاطر جمع رکھیے کہ عوام کا اجتماعی ذہنی شعور اسکو بدل دے گا، کہ قانون سازی کے لیئے ہر پانچ سال بعد چناؤ کروانے کا یہی مطلب ہے کہ “ثبات ہے بس ایک تغیر کو زمانے میں”! جب ہم جمہوریت جو کہ اور سیکولر سرمایہ دارانہ نظام کی پیداوار ہے کو قبول کر چکے ہیں تو اسی نظام کے اندر رہتے ہویے قانون سازی ہورہی ہے۔ آپ کہاں تک اور کب تک ایک سیکولر نطام میں رہتے ہوئے اس نظام کی روح سے رو گردانی کر سکتے ہیں؟ بلاول کی تقریر، اکیسویں ترمیم، غیرت کے نام پر قتل کے خلاف قانون سازی، حقوق نسواں کا قانون وغیرہ اسی کا شاخسانہ ہے۔

 

 

 

It was 29th of February, when I woke up with the news of hanging of Malik Mumtaz Hussain Qadri. Though; I believe that there must be moratorium on capital punishment in Pakistan, where the justice system is not comparatively transparent as compared with other nations and that he must  have been interned for life, at maximum but let bygones be bygones. Now the point is, what is next?

International media has already started praising PMLN government for the paradigm shift from conservative right wing party to a liberal democratic party. But is this praise enough when in Pakistan itself there are hundreds of thousands of people come on roads of Rawalpindi to bid farewell to Mumtaz Qadri and all religious parties’ leaders attend the same. Doesn’t this mean that multitude is against hanging of Mumtaz Qadri? Since, they are planning for bigger demonstrations on Qadri’s chehlum and such practices seem to be continued for days to come. Recently when Nawaz Sharif was in Saudi Arabia, people chanted slogans in favour of Qadri in the presence of Chief of Army Staff. We witnessed the same thing happening at Karachi Airport with Pervaiz Rasheed. Let us not talk about the formidable situation when there will be Qadri’s mausoleum built etc for the moment since he is being considered now as a protagonist of the holy cause.

What we see now is a mere statement from Minister for Broadcasting Mr. Pervaiz Rasheed and rest there is death silence in the chambers of state as to why this hanging was necessary. It is the high time that state must tell the nation as to what crimes did Mumtaz Qadri commit. Right now there is an upheaval, though somehow silent, being built in the common man that state has murdered Mr. Qadri unlawfully, which must not be ignored. Almost every day we see the page long advertisements of PMLN’s so called achievements on securing loans till laying foundation stones of some projects or even approving some project but after the hanging of Mr. Qadri we didn’t see any advertisement or write up and any of the vernaculars, educating nation about the nature of crime(s) Qadri committed. State must take such measures as to build an opinion of the common man, educating the nation that nobody is above law and it is not under jurisdiction of  common citizens to be prosecutor, judge, jury, appellate court and executioner by themselves. It is only state’s responsibility to do so. Otherwise the chaos is imminent. State must take such measure to curb the situation right now and this would be the next step towards a plural democratic state after 21st amendment.

Secondly, it is the time when the role of Council of Islamic Ideology (CII) is limited by state. If it is necessary to keep CII (since, parliament is enough for lawmaking), the role must (only) be to advise as to how the laws can be made Shariah compliant with today’s scientific world and that also upon request of elected representatives only. There must be reserved seats for scientists and civil activists so that head of the constitutional body doesn’t show ignorance towards scientific research.

If state won’t act by itself, it is bound to act on behest of those powers who shape the world and ultimately lead the world. Pakistan was not formed to be a parasite and rely on others’ policies. It has to lead show to the world its own culture, own laws which have oozed from this very land as a result of five thousand years of rich history and civilization. It has to evolve towards pluralistic democracy so that we must have something to offer to the world. Which we currently lack.

 

30 September 2015. By Staff Reporter:

5425ac0fb8390
United Nations: Nawaz Sharif during his speech in the United Nations General Assembly has vowed for a permanent seat at UNSC. Pakistan has already gained the overwhelming support from member countries already through her continuous and intense diplomatic efforts. The supporting countries included existing five permanent members.
Prime Ministers’ Speech to the assembly involved around the efforts of Pakistan to bring about the peace in the world, contribution towards achieving Human Rights goals, boosting economy, elevation of poverty and assistance paid to the neighboring countries from financial aspect. He made a solid ground regarding his plea for permanent seat. He accentuated the below major points in this regard;
“It is obvious today to the world as to why Pakistan deserves the permanent seat in UN Security Council. The world enjoys peace because of efforts of the Pakistan for bridging the gap between different civilizations, sects and religions. The once down trodden and dilapidated Afghanistan now enjoys peace is because of Pakistan who has helped Afghan people and military curb terrorism”, he proudly said.
Emphasizing on the economy and science and technology, insofar as Pakistan is concerned, he told the world, “The people of Pakistan have the largest per capita income in the world. In last five years the most research papers were published from Pakistan. In the field of space, robotics, medicine, medical sciences, agriculture sciences Pakistan has been extending the helping hand not only to its neighbors but to whole Africa and south America. Pakistan has been ranked as one of the top ranked country in export of doctors and technical staff. Pakistan has been launching the satellites for education purpose and for improving communication in the age of information not only for Pakistan but for other countries as well and has achieved numerous goals including harvesting the energy from space. There is still a lot to be done and achieve, however”.

Prime Minister also emphasized on the importance of the peace in the world. He impressed upon the world to take necessary measures as necessary to bring about peace in their countries. He said that the charity of the peace must begin at home. “Pakistan cities are amongst the top peaceful cities in the world” he mentioned providing reference to a latest survey in this regard. He also mentioned how Pakistan was striving to achieve the human rights goals. “We are striving to achieve gender equality, though Pakistan is inherently a tribal culture and patriarchal society we have achieved a lot in this regard. In Pakistan there is no minority based on ethnicity, language, race, creed or religion. In front of state all citizens are equal and Pakistani. This is what our founding father, Quaid e Azam Muhammad Ali Jinnah taught us during is 11th August 1947’s speech”.

Prime Minister Nawaz Sharif was given loud applause and the assembly went on to cheer for Pakistan for long when Prime Minister alluded to the succor provided to poor countries. “We have helped and are helping various countries set up their police systems, military, schools and colleges. Pakistan based multinational companies are doing the business from gold and copper mining and oil exploration and refining to building roads in almost all countries of the world. Some of those companies have the highest number of the employees. The Pakistan Fund for Education is renowned globally and is providing free education to the needy around the globe. The Pakistan Health Foundation is just a phone call away from anyone, since it has its presence around the globe”.

PM took this opportunity to stress on the climate change and preserving natural environment. “Today Pakistan maintains almost 25% of the forest in the country and such laws have been enacted which prevent not only cutting of the trees but also using the forest land for construction or housing purpose. Pakistan has one of the strictest environment policy”.

Nawaz Shraif iterated the fact as to how State of Pakistan resolved the Kashmir issue without indulging into any fight with India, who provoked many a times for a war, by just diplomacy and talks.

When concluding the speech he asked general assembly that it was the high time that Pakistan shall be given a permanent seat in security council in order to play a bigger role in the world politics and stabilizing the global peace.
It should be noted that Nawaz Sharif remained the focal point of the global media and his speech was broadcasted live on leading news channels with special discussion session on his speech. Nawaz Sharif’s such demand is being lauded all over the world and Pakistan is likely to become the permanent member of the UNSC in near future.

 

Note: This is a satire. I wish the above was true.